تو کجا من کجا، مظفر وارثی

0

تو کجا من کجا

تو امیر حرم، میں فقیرعجم
تیرے گن اور یہ لب، میں طلب ہی طلب
تو عطا ھی عطا، میں خطا ہی خطا
تو کجا من کجا

تو ابد آفریں، میں ہوں دو چار پل
تو یقیں میں گماں، میں سخن تُو عمل
تو ہے معصومیت، میں نری معصیت
تو کرم میں خطا، تو کجا من کجا

تو ہے احرام انور باندھے ہوے
میں درودوں کی دستار باندھے ہوے
عشق تو، میں تیرے چار سو
تو اثر میں ، تو کجا من کجا

میرا ہر سانس تو خوں نچوڑے میرا
تیری رحمت مگر دل نہ توڑے میرا
کاسہ زات ہوں، تیری خیرات ہوں
تو سخی میں گدا، تو کجا من کجا

تو حقیقت ہے, میں صرف احساس ہوں
تو سمندر ہے, میں بھٹکی ہوءی پیاس ہوں
میرا گھر خاک پر اور تیری رہگزر
سدرۃ المنتہی، تو کجا من کجا

ڈگمگاٰوں جو حالات کے سامنے
آے تیرا تصور مجھے تھامنے
میری خوش قسمتی، میں تیرا امتی
تو جزا میں رضا، تو کجا من کجا

میرا ملبوس ہے پوشی تری
مجھ کو تابِ سخن دے خموشی تری
تو جلی میں خفی، تو اٹل میں نفی
تو صلہ میں گلہ، تو کجا من کجا

دوریاں سامنے سے جو ہٹنے لگیں
جالیوں سے نگاہیں لپٹنیں لگیں
آنسووں کی زباں ہو میری ترجماں
دل سے نکلے صدا، تو کجا من کجا

تو امیر حرم، میں فقیرعجم
تیرے گن اور یہ لب، میں طلب ہی طلب
تو عطا ھی عطا، میں خطا ہی خطا
تو کجا من کجا
تو کجا من کجا
تو کجا من کجا

You might also like

تبصرے

Loading...