آدمی بیتی

جدوں سال ہو جاندے آں دس۔اوے کدے رولیا منڈا ،تے کدے لیا ہس۔

(دس سال کی عمر میں بچے کو کوئی فکر نہیں ہوتی وہ اس عمر میں ہنستا ہے یا روتا ہے )

جدوں سال ہوجاندے آں وی۔ دیوے کوئی مت ،تاں منڈاکہندا جی او جی ۔

(بیس سال کی عمر میں بچہ نصیحت کو بے اعتنائی سے جی او جی کہہ کر ٹال جاتا ہے)

جدوں سال ہوجاندے آں تی۔ گھبرو کردا اے ، گھر والی دے اگے جی جی جی۔

(تیس سال کی عمر میں جوان جورو کے سامنے بے بسی کی تصویر بناپھرتا ہے )

جدوں سال ہوجاندے آں چالی ۔گل وچ پے جاندی آ ،قبیل داری دی پنجالی۔

(چالیس سال کی عمر میں آدمی بال بچوں کا پیٹ بھرنے کے لئے دن رات کام میں جتا رہتا ہے)

جدوں سال ہوجاندے آں پنجاہ ۔تاں باپو نئیں من دا کہنا ،کہندا اے جااوے جا ۔

(پچاس سال کی عمر میں آدمی اپنے آپ کو عقل کل سمجھنے لگتا ہے)

جدوں سال ہوجاندے آں سٹھ ۔تاں بابا دیندا اے، لیڑے نوں گھٹ کے گٹھ ۔

( ساٹھ سال کی عمرمیں آدمی روپے پیسے کو سوچ سمجھ کر خرچ کرنا شروع کرتا ہے)

جدوں سال ہوجاندے آں ستر۔تاں مدھم پے جاندا، بابے دے متھے دا نچھتر ۔

(ستر سال کی عمر میں بینائی ، شنوائی اور عقل و خرد کمزور پڑنا شروع ہوجاتی ہیں)

جدوں سال ہوجاندے آں اسی۔ بابا منگے پیا دُدھ ،پت نوہاں لیا کے دیند ے لسی ۔

(اسی سال کی عمر میں زبان لڑکھڑانے لگتی ہے ، بولتا کچھ ہے اور لوگ سمجھتے کچھ اور ہیں)

جدوں سال ہوجاندے آں نبے۔ بابے نو کوئی گل نہ پھبے ،مڑ کے مان جوانیاں لبھے۔

(نوے سال کی عمر میں با با اپنے ماضی اور جوانی کی یاد وں میں مگن رہتا ہے )

جدوں سال ہوجاندے آں سو۔تاں دھیاں پت کہندے، بابا ہن تے مگروں لوو ۔

( جب آدمی سوسال کا ہوجائے تو سب پر بوجھ بن جاتا ہے )

You might also like More from author

تبصرے

Loading...