دادا کی وراثت میں یتیم پوتے کا حصہ نہ ہونے کے دلائل۔ نجم الحسن

ایک پیچیدہ مسئلہ کا حل
 ﻓﺮﺽ ﮐﺮﯾﮟ ﺍﯾﮏ ﺻﺎﺣﺐ ﺟﺎﺋﯿﺪﺍﺩ ﺷﺨﺺ ﮐﮯ ﺑﯿﭩﮯ ﺷﺎﺩﯼ ﺷﺪﮦ ﺻﺎﺣﺐ ﺍﻭﻻﺩ ﮬﯿﮟ ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﺑﯿﭩﺎ ﻓﻮﺕ ﮬﻮﺟﺎﺗﺎ ﮬﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﻓﻮﺕ ﺷﺪﮦ ﺑﯿﭩﮯ ﮐﯽ ﺍﻭﻻﺩ ﺯﻧﺪﮦ ﮬﮯ ﺗﻮ ﮐﯿﺎ ﺍﻥ ﭘﻮﺗﻮﮞ ﮐﻮ ﺩﺍﺩﺍ ﮐﯽ ﺟﺎﺋﯿﺪﺍﺩ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺑﺎﭖ ﮐﺎ ﺣﺼﮧ ﻣﻠﻨﺎ ﭼﺎﮬﺌﮯ ﯾﺎ ﻧﮩﯿﮟ؟ ﮬﻤﺎﺭﯼ ﻓﻘﮧ ﺗﻮ ﯾﮧ ﮐﮩﺘﯽ ﮬﮯ ﮐﮧ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﮐﭽﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﻠﻨﺎ ﭼﺎﮬﺌﮯ ﺁﭖ ﮐﯿﺎ ﺳﻤﺠﮭﺘﮯ ﮬﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﯾﺘﯿﻢ ﭘﻮﺗﮯ ﭘﻮﺗﯿﻮﮞ ﮐﻮ ﻭﺭﺍﺛﺖ ﺳﮯ ﻣﺤﺮﻭﻡ ﮐﺮﻧﺎ ﻇﻠﻢ نہی ؟؟؟
پروفیسراشکر فاروقی صاحب
الجواب باسم ملھم الصواب
 قرآن مجید اور احادیث طیبہ اور فقہ کی رو سے دادا کی جائیداد میں سے بیٹوں کی موجودگی میں یتیم پوتوں کومیراث میں سے حصہ نہی ملے گا .ہاں البتہ دادا اپنے یتیم پوتوں کے لیے اپنے تہائی مال میں سے وصیت کر سکتا ہے. دلائل مندرجہ ذیل ہیں.
دلیل نمبر 1.
ﻟﻠﺮﺟﺎﻝ ﻧﺼﯿﺐ ﻣﻤﺎﺗﺮﮎ ﺍﻟﻮﺍﻟﺪﯾﻦ ﻭﺍﻻﻗﺮﺑﻮﻥ ….(القرآن)
ﺑﯿﭩﺎ ﻗﺮﯾﺒﯽ ﺍﻭﺭ ﭘﻮﺗﺎ ﺍﺑﻌﺪ ﺭﺷﺘﮧ ﺩﺍﺭ ﮨﮯ … ﺍﻭﺭ ﺍﻗﺮﺏ ﮐﮯ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﯾﻌﻨﯽ ﺑﯿﭩﮯ ﮐﮯ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺍﺑﻌﺪ ﯾﻌﻨﯽ ﭘﻮﺗﺎ ﻗﺮﺁﻥ ﮐﯽ ﺭﻭ ﺳﮯ ﺑﻬﯽ ﻣﺤﺮﻭﻡ ہے
دلیل نمبر 2.
 ﺍﻣﺎﻡ ﺑﺨﺎﺭﯼ ﻧﮯ ﺑﺎب ﮨﯽ ﺑﯿﭩﮯ ﮐﮯ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﭘﻮﺗﮯ ﮐﯽ ﻣﺤﺮﻭﻣﯽ ﮐﺎ ﺑﺎﻧﺪﻫﺎ ﮨﮯ … ﺑﺎﺏ ﻣﯿﺮﺍﺙ ﺍﺑﻦ ﺍﻻﺑﻦ ﺍﺫﺍﻟﻬﻢ ﯾﮑﻦ ﻟﮧ ﺍﺑﻦ
معلوم ہوا دادا کی اولاد کے زندہ ہونے کی صورت میں بھی پوتوں کو حصہ نہی ملینگا
دلیل نمبر 3
 ﺑﺨﺎﺭﯼ ﻭ ﻣﺴﻠﻢ ﻣﯿﮟ ﻋﺒﺪﺍﻟﻠﮧ ﺍﺑﻦ ﻋﺒﺎﺱ ﺭﺿﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻨﮧ ﺳﮯ ﺭﻭﺍﯾﺖ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﻟﺤﻘﻮﺍ ﺍﻟﻔﺮﺍﺋﺾ ﺑﺎﻫﻠﻬﺎ ﻓﻤﺎ ﺑﻘﯽ ﻓﻬﻮ ﻻﻭﻟﯽ ﺭﺟﻞ ﺫﮐﺮ …
ﺍﺏ ﺍﺱ  حدیث ﻣﯿﮟ ﺍﻗﺮﺏ ﻣﺮﺩ ﮐﻮ ﻣﺴﺘﺤﻘﯿﻦ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻭﺍﺭﺙ ﺑﻨﺎﯾﺎ ﮔﯿﺎ ﮨﮯ …. ﯾﻌﻨﯽ ﺑﯿﭩﺎ ﮐﮯ ﮨﻮﺗﮯ ﭘﻮﺗﺎ ﻭﺍﺭﺙ نہی بن سکتا.
دلیل نمبر 4.
 ﺗﺮﮐﮧ ﮐﯽ ﺗﻘﺴﯿﻢ ﻣﯿﮟ ﻗﺮﺍﺑﺖ ﻣﻠﺤﻮﻅ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ ﻧﮧ ﮐﮧ ﻓﻘﯿﺮﯼ ﻭﻣﺤﺘﺎﺟﯽ ﭼﻨﺎﻧﭽﮧ ﻗﺮﺁﻥ ﻣﯿﮟ ﮨﮯ ﻣﻤﺎﺗﺮﮎ ﺍﻟﻮﺍﻟﺪﺍﻥ ﻭﺍﻻﻗﺮﺑﻮﻥ ﺍﻭﺭ ﻭﺍﻟﻮﺍﺍﻻﺭﺣﺎﻡ ﺑﻌﻀﻬﻢ ﺍﻭﻟﯽ ﺑﺒﻌﺾ ﺍﮔﺮﺗﻘﺴﯿﻢ ﻭﺭﺍﺛﺖ ﻓﻘﯿﺮﯼ ﻭﻣﺤﺘﺎﺟﯽ ﮐﮯﻟﺤﺎﻅ ﺳﮯﮨﻮﺗﯽ ﺗﻮ ﺗﺮﮐﮧ ﺍﻭﻻﺩﻣﯿﮟ ﺗﻘﺴﯿﻢ ﮨﻮﻧﮯﮐﯽ ﺑﺠﺎﺋﮯ ﺧﺎﻧﺪﺍﻥ ﯾﺎﭘﮍﻭﺱ ﮐﮯ ﻓﻘﯿﺮﻭﮞ ﻭﻣﺤﺘﺎﺟﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺗﻘﺴﯿﻢ ﮨﻮﺗﺎ
ﯾﮧ ﺍﯾﮏ ﺍﯾﺴﺎﺍﺻﻮﻝ ﮨﮯﮐﮧ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﺍﻭﺭﮐﺎﻓﺮﺣﺘﯽ کہ ﯾﻮﺭﭘﯽ ﺩﻧﯿﺎﮐﮯﮨﺎﮞ ﺑﻬﯽ ﻣﺴﻠﻢ ﮨﮯ
 ﻟﻬﺬﺍﯾﺘﯿﻢ ﭘﻮﺗﻮﮞ ﮐﻮ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﻣﻨﺪﯼ ﮐﺎﺳﮩﺎﺭﺍﻟﯿﮑﺮ ﻣﺴﺘﺤﻖ ﻭﺭﺍﺛﺖ ﻗﺮﺍﺭ ﺩﯾﻨﺎ ﺟﺬﺑﺎﺗﯽ ﺩﻟﯿﻞ ﺳﮯﺯﯾﺎﺩﮦ ﮐﻮئی ﺣﯿﺜﯿﺖ ﻧﮩﯿﮟ ﺭکھتی.
دلیل نمبر 5.
 علم میراث کا ایک متفقہ ﺍﺻﻮﻝ ﯾﮧ ﮨﮯﮐﮧ ﻗﺮﯾﺒﯽ ﮐﮯﮨﻮﺗﮯﮨﻮﺋﮯ ﺑﻌﯿﺪﯼ ﮐﻠﯽ ﯾﺎﺟﺰﺉ ﻃﻮﺭ ﭘﮧ ﻣﺤﺮﻭﻡ ﮨﻮﺟﺎﺗﺎﮨﮯ
ﻣﺜﺎﻝ:
ﺧﺎﻭﻧﺪﻻﻭﻟﺪ ﻓﻮﺕ ﮨﻮﺗﻮﺑﯿﻮﮦ ﮐﺎﺣﺼﮧ ﺭﺑﻊ ﮨﮯ
ﺍﮔﺮﺍﻭﻻﺩﮨﻮﺗﻮ ﺑﯿﻮﮦ ﮐﻮﺛﻤﻦ ﻣﻠﺘﺎﮨﮯ.
ﯾﻌﻨﯽ ﺍﻭﻻﺩ ﻧﮯﺟﺰﺉ ﻃﻮﺭﭘﮧ ﻣﺤﺮﻭﻡ ﮐﯿﺎ ( ﺣﺼﮧ ﮐﻢ ﮐﺮﺩﯾﺎ )
ﺑﯿﭩﺎﻻﻭﻟﺪﻓﻮﺕ ﮨﻮﺗﻮ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﮐﻮﺣﺼﮧ ﻣﻠﺘﺎﮨﮯ
ﻣﮕﺮﺑﯿﭩﺎ ﺍﮔﺮﺑﯿﭩﮯﭼﻬﻮﮌﮐﺮﻣﺮﺍﺗﻮ ﻣﯿﺖ ﮐﮯﻣﺎﮞ ﺑﺎﭖ ﻣﺤﺮﻭﻡ ﮨﻮﺟﺎﺗﮯﮨﯿﮟ
ﺟﺐ ﯾﮧ ﺍﺻﻮﻝ ﭘﺎﯾﮧ ﺛﺒﻮﺕ ﮐﻮﭘﮩﻨﭻ ﮔﯿﺎﮐﮧ ﻗﺮﯾﺒﯽ ﺑﻌﯿﺪﯼ ﮐﻮﮐﻠﯽ ﯾﺎﺟﺰﺉ ﻃﻮﺭﭘﮧ ﻣﺤﺮﻭﻡ ﮐﺮﺗﺎﮨﮯ
ﺗﻮ ﺑﯿﭩﻮﮞ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯﭘﻮﺗﻮﮞ ﮐﺎﻣﺤﺮﻭﻡ ﮨﻮ ﺟﺎﻧﺎﺧﻼﻑ ﺍﺻﻮﻝ ﻧﮧ ﮨﻮﺍ
ﺭﮨﯽ ﯾﮧ ﺑﺎﺕ ﮐﮧ ﭘﻮﺗﮯ ﺟﺰﺉ ﻣﺤﺮﻭﻡ ﮐﯿﻮﮞ ﻧﮧ ﮨﻮﺋﮯ ﮐﻠﯽ ﻣﺤﺮﻭﻡ ﮐﯿﻮﮞ ﮨﻮﺋﮯ؟؟؟
 ﺗﻮﺍﺱ ﮐﺎﺟﻮﺍﺏ ﯾﮧ ﮐﮧ ﺫﻭﯼ ﺍﻟﻔﺮﻭﺽ ﮐﮯﺣﺼﮯ ﭼﻮﻧﮑﮧ ﻣﻌﯿﻦ ﮨﯿﮟ ﺍﺱ ﻟﯿﺌﮯﻭﮦ ﮐﺒﻬﯽ ﮐﻠﯽ ﺍﻭﺭ ﮐﺒﻬﯽ ﺟﺰﺉ ﻃﻮﺭﭘﮧ ﻣﺤﺮﻭﻡ ﮨﻮﺍﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﻟﯿﮑﻦ ﻋﺼﺒﺎﺕ ﮐﮯ ﺣﺼﮯﭼﻮﻧﮑﮧ ﻣﻌﯿﻦ ﻧﮩﯿﮟ ﺍﻥ ﮐﮯﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﺍﺻﻮﻝ ﯾﮧ ﮨﮯﮐﮧ ﻗﺮﯾﺒﯽ ﻋﺼﺒﮯﮐﯽ ﻣﻮﺟﻮﺩﮔﯽ ﻣﯿﮟ ﺑﻌﯿﺪﯼ ﻋﺼﺒﮯﮐﻠﯽ ﻣﺤﺮﻭﻡ ﮨﻮﺍﮐﺮﺗﮯﮨﯿﮟ ﺑﯿﭩﮯﺍﻭﺭ ﭘﻮﺗﮯ ﻋﺼﺒﺎﺕ ﻣﯿﮟ ﺳﮯﮨﯿﮟ ﺑﯿﭩﻮﮞ ﮐﯽ ﻣﻮﺟﻮﺩﮔﯽ ﻣﯿﮟ ﭘﻮﺗﮯ ﮐﻠﯽ ﻣﺤﺮﻭﻡ ﮨﻮﮞ ﮔﮯ
دلیل نمبر 6
علم میراث ایک متفقہ ﺍﺻﻮﻝ ﯾﮧ بھی ﮨﮯﮐﮧ ﺯﻧﺪﮦ ﻣﺮﺩﮮﮐﺎﻭﺍﺭﺙ ﺑﻨﺘﺎ ﮨﮯﻣﺮﺩﮦ ﺯﻧﺪﮦ ﮐﺎﻧﮩﯿﮟ
ﺩﻟﯿﻞ: ﻣﻤﺎﺗﺮﮎ ﻣﻤﺎﺗﺮﮐﺘﻢ ﻣﻤﺎﺗﺮﮐﻦ کے الفاظ قرآن مجید میں ذکر ﮨﯿﮟ
 ﺟﻮﻟﻮﮒ ﯾﺘﯿﻢ ﮐﮯ ﻣﺴﺘﺤﻖ ﮨﻮﻧﮯﭘﺮﯾﮧ ﺩﻟﯿﻞ ﭘﯿﺶ ﮐﺮﺗﮯﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﯾﮧ ﺩﺍﺩﺍ ﺳﮯﺍﭘﻨﮯﺑﺎﭖ ﮐﺎﺣﺼﮧ ﻟﮯ ﺭﮨﮯﮨﯿﮟ ﺑﺎﻟﻔﺎﻅ ﺩﯾﮕﺮﻭﮦ ﯾﻮﮞ ﮐﮩﮧ ﺭﮨﮯﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺍﻥ ﮐﺎﺑﺎﭖ ﺟﻮ ﺍﻥ ﮐﮯﺩﺍﺩﺍﮐﮯ ﺟﯿﺘﮯﺟﯽ ﻣﺮﮔﯿﺎﺗﻬﺎﻭﮦ ﻣﺮﺩﮦ ﺍﭘﻨﮯﺯﻧﺪﮦ ﺑﺎﭖ ﮐﺎﻭﺍﺭﺙ ﺑﻨﺎﭘﻬﺮﺍﺱ ﺳﮯ ﻭﺭﺍﺛﺖ ﺍﻥ ﯾﺘﯿﻤﻮﮞ ﮐﻮ ﻣﻨﺘﻘﻞ ﮨﻮﺉ ﯾﮧ ﻻﺟﮏ ﻣﺬﮐﻮﺭﮦ ﻗﺮﺁﻧﯽ ﺍﺻﻮﻝ ﮐﮯﺧﻼﻑ
ہے.
 الحاصل .دلائل بالا کی رو سے پوتے دادا کی جائیداد میں حصہ نہی پا سکتے, البتہ دادا اپنے تہائی مال میں سے پوتوں کے لیے وصیت کر سکتا ہے.
واللہ اعلم بالصواب.
 “نجم نامہ”

دادا کی جائیداد میں یتیم پوتے کے وراثت کے حق کے لیے پڑھیے۔ وراثت کے چند پہلو 

Dr. Muhammad Hamidullah
Visit Website of Dr. Muhammad Hamidullah

You might also like More from author

تبصرے

Loading...